Winapster Logo

Winpaster

Bharosa

Bharosa – Non Seasonal – Novel by Zaisha Khan – Complete PDF


You can read and get the Bharosa Novel by Zaisha Khan with complete PDF. Keep reading this Bharosa Novel. Winapster offers the best reviews on all types of novels. This site has a vast collection of Urdu reviews where you will find novels of every type. (Such as Force Marriage-Based, Road Hero Based, Friendship Based, Funny Based and Romantic Based, etc.) Here you also find a variety of free Urdu novels of all social media writers. That are going to publish their novels in order to test their writing abilities.

Books are then the best friend of a person who never leaves a person’s side even in loneliness, by reading them we can know every aspect of life. By reading it in sorrow, we forget then the bitterness of our life. Somehow it affects our thoughts as well.

Winapster contributes a lot towards introducing quality work of seasoned writers and then bringing out the new talent of Global Urdu Writers. Thus, it is like a virtual library where you can browse and then read novels of your choice except for one big difference its free and then does not require any kind of fee.

Bharosa Novel by Zaisha Khan:

Zaisha Khan has written a variety of novels rude hero-based romantic novels, and then social issue-based novels, that have gained popularity among their readers and have a large number of fans waiting for new novels.

  • Novel Name: Bharosa
  • Writer: Zaisha Khan
  • Category: Social Issue Based Novel
  • Type: Non Seasonal

Bharosa Sneak Peak Part A:

Sheeza.

hey man

Get up, it’s six o’clock in the evening.

At first she didn’t understand anything because of her sleepiness, but when she understood, she got up from the bed with a jerk.

Dude, why didn’t you pick me up earlier? Shiza said while picking up her bag and key from the table

I told you to wake me up till four o’clock, now I will be cooked.

I was also asleep, my eyes just opened. I’m sorry, my friend

I have to go now I will call you later Sheeza said sitting in the car

Okay, but take care of yourself and drive comfortably. And if you need me, call me. Uruj spoke with concern.

Ok now I am going Sheza started the car and moved forward

While driving with one hand, using the other hand, Sheeza reached her bag and took out her mobile phone and started checking it. She breathed a sigh of relief after seeing no call or message.

It seems that he has not returned yet. May Allah help me to reach home before that.

I should have set the alarm and slept. Tears came out of Shiza’s eyes. She wiped the tears from her cheeks and put her foot on the accelerator.

Shiza quickly entered her house and her watchman Ghulam opened the gate for her.

Shiza parked the car in the garage and got out, but when she saw the white Range Rover Sport standing next to her, she became dizzy. Her fear increased.

Ma’am, you are fine. The slave ran to her.

Tears were constantly flowing from Shiza’s eyes, I don’t know how she dared to ask him.

Yes, madam, when did you come?

Oh, now, I will be cooked. Sheeza staggered with her hands on her head

Ma’am, you are fine, the watchman was worried

I’m fine, leave me alone.

He slowly opened the door and entered, all the lights were on, the TV was also on, with Super Sports channel on it. With a pounding heart, he stepped inside the house and closed the door quietly so as not to make a sound. be

Shiza entered the room climbing the stairs with heavy feet, not seeing anyone in the room, she breathed a sigh of relief.

Where am I coming from?” Sheeza froze on hearing his voice.

I am not talking to myself, I am asking you where and then I am coming from.

Shiza turned to him in fear who was leaning against then the door of the room watching her

His eyes were looking at Shiza like a hunter looks then at his prey.

Shizah gasped in fear

He was wearing a pair then of black combat shorts. Which meant then he had just arrived home a few minutes ago

Sheeza Waleed stepped closer to her as Waleed took then a step forward Sheeza took her steps back.

Waleed put his hand in his pocket and then sighed.

Bharosa Sneak Peak Part B:

I am asking you something Waleed said while gritting his teeth, Shiza’s silence was making him angry.

“I.. Tears started falling from Shiza’s eyes.

Shiza, if you don’t open then your mouth, I will kill you.

Now tell me quickly where you are coming from at this time of the evening.

I was with Uroog. Tears started flowing then from his eyes.

Waleed raised an eyebrow and looked at him and took then a step towards him. Seeing him moving forward, Shiza took a step back.

Waleed sighed coldly.

“Why are you crying? I haven’t even touched you yet,” said Waleed looking confused then at Shiza’s actions.

I know you are going to kill me, the thought of you raising your hands on then me kills me, I can’t bear this pain.

Shizah started crying while clutching her heels and bag to her chest

Baby who said I am going to kill you, Urooj has already called me and then told me everything.

Shiza stood still and listened to his words. Waleed wiped then her tears and hugged her

Forgive me, I scared you, now you are fine, Waleed raised then his face and said.

Shiza nodded yes.

Waleed wiped his face full of tears.

“I will cook for you,” Shiza said hesitantly, moving away then from him

“No..don’t worry about it, I have already eaten” Waleed took her by then the hand and brought her close to him and took the heels and bag from her hand and placed them on the table.

Today, the mountains of charity were falling on Shiza, she could not believe that this was her Waleed, today she seemed to have changed then a lot, today she did not raise her hand on him.

Go and change your clothes.

Shiza was shocked and quickly took out her night gown from the closet and then locked herself in the washroom.

On his body, there were indigo marks on his legs, thighs, waist, which were then the evidence of Waleed’s brutality.

Shiza wiped her tears, took a shower with hot water and then came out wearing a gown.

Before that Shiza went to her designated place to sleep, she felt a strong grip on her back, she knew very well who he was, Shiza took a long breath.

Waleed turned her towards him and then took her lips in his reach.

He could not remember then the last time Waleed had touched him so lovingly.

Both of them were breathing heavily but Walid was not taking the name of moving away and Na Shiza was trying to push him back. When breathing became difficult, Waleed pulled his lips free and pulled back

Come on, love you. Come on, love you. come on. Shiza shivered as then he pressed her earlobe between his teeth.

Waleed lifted Shizah in his lap and laid her on the bed and leaned back on then her lips.

:بھروسہ سنیک پیک حصہ اے

شیزہ ۔۔شیزہ۔۔شیزہ ۔اٹھو ،اس نے کراہتے ہوئے اپنی آنکھیں کھولی تو سامنے عروج کو خود کو گھورتے ہو دیکھا ۔۔

ارے یار،،
اٹھ جاوں شام کے چھ بج چکے ہیں عروج شیزہ کے اوپر سے کمبل ہٹاتے ہوئے بولی ۔۔
نیند کی ہوماری کی وجہ سے پہلے تو اسے کچھ سمجھ نہیں آیا لیکن جب سمجھ آیا تو ایک جھٹکے سے بیڈ سے اٹھی ۔۔

یار تم نے مجھے پہلے کیوں نہیں اٹھایا ۔۔شیزہ میز سے اپنا بیگ اور چابی اٹھاتے ہوئے بولی

میں نے تم سے بولا تھا مجھے چار بجے تک جگا دینا اب میں پکا ماری جاوں گی شیزہ اپنی ہیلس اور بیگ اٹھائے دروازے کی طرف بڑھی ۔۔

یار میں بھی سو گئ تھی میری بھی ابھی آنکھ کھولی ۔۔ایم سوری یار

مجھے ابھی جانا ہو گا میں بعد میں تمہیں کال کروں گی شیزہ گاڑی میں بیٹھتے ہوئے بولی

ٹھیک ہے ،،لیکن اپنا خیال رکھنا اور گاڑی آرام سے چلانا ۔۔اور اگر میرے ضرورت ہوئ تو مجھے کال کر لینا ۔۔عروج فکر مندی سے بولی ۔۔
اوکے اب میں چلتی ہوں شیزہ گاڑی سٹارٹ کئے آگے بڑھ گئ

ایک ہاتھ سے گاڑی چلاتے ہوئے دوسرے ہاتھ کا استعمال کئے شیزہ اپنے بیگ تک پہنچی اور اس میں سے موبائل نکالے چیک کرنے لگی کوئ کال یا میسج نہ دیکھ کر اس نے سکون کا سانس لیا ۔۔۔

لگتا ہے وہ ابھی تک واپس نہیں آیا ۔۔یا اللہ میری مدد کرنا میں اس سے پہلے گھر پہنچ جاوں۔۔

مجھے الارم لگا کر سونا چاہیے تھا شیزہ کی آنکھوں سے آنسو بہہ نکلے اس نے اپنے گالوں سے آنسو صاف کئے ایکسلریٹر پر پیر رکھا

شیزہ تیزی سے اپنے گھر میں داخل ہوئ ان کے واچ مین غلام نے اس کے لیے گیٹ کھولا ۔۔
شیزہ گیراج میں گاڑی پارک کئے باہر نکلی لیکن جب سفید رینج روور اسپورٹ کو اپنے پاس کھڑا دیکھا تو اس کا سر چکرا گیا ۔۔اس کے خوف میں اور اضافہ ہو گیا

میڈم آپ ٹھیک تو ہے ۔۔غلام بھاگتے ہوئے اس تک پہنچا ۔۔

سر آ گئے ہیں شیزہ کی آنکھوں سے آنسو مسلسل بہہ رہے تھے نہ جانے اس نے کیسے ہمت کر کے اس سے پوچھا

یس میڈم سر تو کب آ گئے ۔
او ۔۔نو اب تو میں پکا مر گی شیزہ اپنے سر ہاتھ رکھے لڑکھڑا گئ ۔۔

میڈم آپ ٹھیک تو ہے واچ مین پریشان ہوا
میں بلکل ٹھیک ہوں مجھے اکیلا چھوڑ دو شیزہ اس کے پاس سے گزری مرے مرے قدموں سے گھر کی جانب بڑھی ۔۔

آہستگی سے دروازہ کھولے اندر داخل ہوئ لائٹس ساری آن تھی ٹی وی بھی آن تھا جس پر سپر اسپورٹس کا چینل لگا ہوا تھا ۔۔دھڑکتے دل کے ساتھ اس نے گھر کے اندر قدم رکھا اور اتنا آرام سے بند کیا کہ شور کی آواز پیدا نہ ہو ۔

شیزہ دبے پاوں سڑھیاں چڑھتی ہوئ کمرے میں داخل ہوئ کمرے میں کسی کو نہ پاکر اس نے سکون کا سانس لیا

کہاں سے آ رہی ہوں ” شیزہ اس کی آواز سنے اپنی جگہ منجمد ہو گئ ۔۔
میں خود سے بات نہیں کر رہا میں تم سے پوچھ رہا ہوں کہاں سے آ رہی ہوں ۔۔۔۔
شیزہ ڈرتے ہوئے اس کی جانب پلٹی جو کمرے کے دروازے کے ساتھ ٹیک لگائے اسے ہی دیکھ رہا تھا
اس کی نظریں شیزہ کو ایسے دیکھ رہی تھی جیسے کوئ شکاری اپنے شکار کو دیکھتا ہے ۔۔
ڈر کے مارے شیزہ نے اپنا خشک ہوا گلا تر کیا

.. اس نے ایک سیاہ کمبیٹ شارٹ پہنا ہوا تھا۔ جس کا مطلب تھا وہ چند منٹ پہلے ہی گھر پہنچا تھا

شیزہ ۔۔۔ولید قدم بڑھتا ہوا اس کے قریب ہوا جیسے جیسے ولید قدم آگے کو بڑھا رہا تھا شیزہ اپنے قدم پیچھے لے رہی تھی

ولید نے روکتے ہوئے جیب میں ہاتھ ڈالتے آہ بھری ۔۔۔

:بھروسہ سنیک پیک حصہ بی

میں تم سے کچھ پوچھ رہا ہوں ولید دانت پیستے ہوئے بولا شیزہ کی خاموشی اسے غصہ دلا رہی تھی ۔۔

“میں..” شیزہ کی آنکھوں سے آنسو گرنے لگے ۔۔

شیزہ اگر تم نے اپنا منہ نہیں کھولا تو میں تمہیں مار ڈالو گا ۔۔

جلدی سے بتاو شام کے اس وقت تم کہاں سے آ رہی ہوں ۔۔

میں عروج کے ساتھ تھی ۔۔اس کی آنکھوں سے آنسو روانگی سے بہنے لگے ۔۔

ولید نے آئ برو اٹھا کر اس کی جانب دیکھا اور ایک قدم اس کی جانب بڑھا اسے آگے بڑھتا دیکھ شیزہ ایک قدم پیچھے لے گئ ۔۔
ولید نے سرد آہ بھری۔۔

تم رو کیوں رہی ہوں میں نے تو ابھی تک تمہیں ہاتھ بھی نہیں لگایا ولید شیزہ کی حرکتیں دیکھ الجھتے ہوئے بولا ۔۔

میں جانتی ہوں تم مجھے مارنے والے ہوں تمہارا مجھ پر ہاتھ اٹھانے کا خیال ہی مجھے مار دیتا ہے میں اس تکلیف کو برداشت نہیں کر سکتی ۔۔۔

شیزہ ہیلس اور بیگ کو اپنے سینے سے لگائے پھوٹ پھوٹ کر رونے لگی

بیبی کس نے کہا میں تمہیں مارنے والا ہوں عروج نے مجھے پہلے ہی فون کر کے سب بتا دیا ہے ولید شیزہ کے قریب ہوئے بولا ۔۔
شیزہ ساکت کھڑی اس کے الفاظ سننے لگی ولید اس کے آنسو صاف کئے اسے اپنے گلے سے لگا گیا

مجھے معاف کرو دو میں نے تمہیں ڈرایا ،،اب تم ٹھیک ہوں ولید اس کا چہرہ اوپر کئے بولا ۔۔
شیزہ نے ہاں میں سر ہلایا ۔۔
ولید نے اس کا آنسو سے بھرا ہوا چہرہ صاف کیا ۔۔

میں تمہارے لیے کھانا بنا دیتی ہوں شیزہ اس سے دور ہوئ ہچکچاہتے ہوئے بولی

“نہیں..اس کی فکر مت کرو، میں پہلے ہی کھا چکا ہوں” ولید نے اسے ہاتھ سے پکڑ کر اپنے قریب کیا اور اس کے ہاتھ سے ہیلس اور بیگ لے کر میز پر رکھ دیں ۔۔

آج شیزہ پر خیرتوں کے پہاڑ ٹوٹ رہے تھے اسے یقین نہیں ہو رہا تھا کہ یہ اس کا ولید ہے آج وہ بہت بدلہ ہوا لگ رہا تھا آج اس نے اس پر ہاتھ نہیں اٹھایا تھا ۔۔۔

جاو جا کر اپنے کپڑے چینج کر لو ولید اس کے ماتھے پر محبت بھرا بوسہ دیے پیچھے ہوا ۔۔
شیزہ شاک ہوئ جلدی سے الماری سے اپنی نائٹ گاون نکلے واش روم میں بند ہو گئ ۔۔

اس کے جسم پر ٹانگوں پر رانوں پر کمر پر جگہ جگہ نیل کے نشان پڑے ہوئے تھے جو ولید کی درندگی کا ثبوت تھے وہ ایک جانور بنا روز اسے چھوٹی چھوٹی وجہ پر مارتا تھا ۔۔۔

شیزہ اپنے آنسو صاف کئے گرم پانی سے شاور لیے گاون پہنے باہر نکلی ۔۔۔

اس سے پہلے شیزہ سونے کے لیے اپنی مخصوص جگہ پر جاتی اس اپنی کمر پر مضبوط گرفت محسوس ہوئ وہ اچھے سے جانتی تھی کہ وہ کون ہے شیزہ نے ایک لمبی سانس بھری ۔۔

ولید اس کا رخ اپنی جانب موڑے اس کے ہونٹوں کو اپنی دسترس میں لے گیا ۔۔

اسے بلکل یاد نہیں تھا کہ آخری بار کب ولید نے اسے اتنے پیار سے چھوا تھا ۔۔
دونوں کی سانسیں بھاری ہو رہی تھی لیکن ولید تھا کہ ہٹنے کا نام ہی نہیں لے رہا تھا اور نا شیزہ اسے پیچھے کرنے کی کوشش کر رہی تھی ۔۔۔وہ اس پل سب کچھ بھولائے بس اس کی قربت میں ہی رہنا چاہتی تھی ۔۔جب سانس لینا دشوار ہو گیا تو ولید اس کے ہونٹوں کو آزاد کئے پیچھے ہوا

آئ لو یو شیزہ ۔۔آئ ریلی لو یو شیزہ کانپ گئ جب اس نے اس کی کان کی لو کو اپنے دانتوں تلے دبایا ۔۔

ولید شیزہ کو گود میں اٹھائے اسے بیڈ پر لٹائے واپس اس کے ہونٹوں پر جھکا ۔۔۔

CLICK BELOW THE DOWNLOAD FROM GOOGLE DRIVE BUTTON TO GET BHAROSA NOVEL

Download From Google Drive

CLICK BELOW THE DOWNLOAD FROM MEDIA FIRE BUTTON TO GET BHAROSA NOVEL

Download From Media Fire

CLICK BELOW THE MORE POPULAR NOVELS BUTTON TO GET POPULAR NOVELS

More Popular Novels

CLICK BELOW THE BEST NOVELS BLOG BUTTON TO GET BEST NOVELS

Best Novels Blog

If you have any queries regarding downloading let us know by commenting below. After reading this novel also leave your precious comments below and let us know about your thoughts and novel selection which type of novels would you like to read and which type you want to be posted on social media, we will try to bring novels according to your choice of selection. Thanks for Reading.


Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *